PakistanUrdu

بلوچستان میں بھارتی ایجنسی را کے مقاصد بے نقاب ہو گئے

کوئٹہ میں ایک پریس کانفرنس کے دوران، بلوچستان کے وزیر داخلہ ضیاء اللہ لانگاؤ نے کہا کہ کالعدم تنظیمیں تحریک طالبان پاکستان (ٹی۔ٹی۔پی) اور بلوچستان لبریشن آرمی (بی۔ایل۔اے) بھارت کے ساتھ اپنے واحد سرمایہ کار کے طور پر مل کر پاکستان میں دہشت گردانہ حملے کرنے کے لیے کام کر رہی ہیں۔انہوں نے بتایا کہ سکیورٹی فورسز نے دو اہم عسکریت پسند کمانڈروں ٹی۔ٹی۔پی۔ کے نصر اللہ عرف مولوی منصور اور ادریس عرف ارشاد کو گرفتار کیا ہے۔اور پھر نصر اللہ کا ریکارڈ شدہ بیان دکھایا۔

نصر اللہ نے بیان میں بتایا کہ وہ 2007 میں ٹی۔ٹی۔پی میں شامل ہونے سے قبل بیت اللہ محسود کے پلیٹ فارم سے کام کر چکا ہے۔اور بتایا کہ آپریشن ضرب عضب کے دوران افغانستان کے صوبے پکتیکا میں آباد ہو گیا تھا۔اس نے خیبر پختو نخوا میں پاکستان آرمی کی چیک پوسٹوں پر کیے گئے حملوں کے بارے میں تفصیل سے بتایا۔نصر اللہ کا مزید کہنا تھا کہ وہ 2023 سے ٹی۔ٹی۔پی کے دفاعی کمیشن میں بطور "امیر" کام کر رہا تھا۔

اس کے بعد نصر اللہ نے ایک پلان کی تفصیل بتائی جو اسے جنوری 2024 میں بتایا گیا تھا،جس کے مطابق بی۔ایل۔اے کا ایک گائیڈ اسے پاک-افغان سرحد عبور کرنے میں مدد کرے گا اور اسے جنوبی بلوچستان لے جائے گا۔اس نے دعوی کیا کہ یہ منصوبہ بی۔ایل۔اے۔ مجید بریگیڈ کے کمانڈر بشیر زیب کی ملی بھگت سے بنایا گیا تھا۔

نصر اللہ نے کہا کہ اس سب کے پیچھے بھارتی خفیہ ایجنسی را کا ہاتھ ہے،جو بی۔ایل۔اے اور ٹی۔ٹی۔پی کا گٹھ جوڑ چاہتی تھی۔انہوں نے بلوچستان میں قدم جمانے کے را کے تین مقاصد بیان کیے۔

  •  سی پیک منصوبے کو سبوتاژ کرنا اور چینی شہریوں کو نشانہ بنانا
  •  جبری گمشدگیوں کے معاملے کو چلانے کے لیے اغوا برائے تاوان کی کاروائیاں کرنا تاکہ انٹیلیجنس ایجنسیوں کو بدنام کیا جا سکے۔
  • بلوچستان میں دہشت گردی کی کاروائیوں کو ہوا دینا اورلوگوں میں انتشار اور مایوسی پھیلانا۔

گرفتاری کے متعلق نصر اللہ نے بتایا کہ وہ اور اس کے ساتھی،قلات کے قریب پہنچے تو پاک فوج کے ایک پیٹرولنگ یونٹ نے انہیں گرفتار کر لیا۔اس نے ٹی۔ٹی۔ پی کے رکن کے طور پر اپنی سرگرمیوں پر افسوس کا اظہار کیا اور خدا سے اور سرگرمیوں سے نقصان اٹھانے والے لوگوں سے معافی مانگی۔

سرکاری ریڈیو پاکستان کے مطابق نصر اللہ کو انٹیلیجنس اور قانون نافذ کرنے والے اداروں نے ایک انتہائی پچیدہ اور مشکل آپریشن کے نتیجے میں پکڑا تھا۔نصر اللہ کا ویڈیو بیان دکھانے کے بعد لانگاؤ نے کہا،"عالمی برادری کو اس میں کوئی شک نہیں چھوڑنا چاہیے کہ اس سب کے پیچھے ایک بین الاقوامی دہشت گرد ملک بھارت ہے۔"وزیر نے روشنی ڈالی کہ ٹی۔ٹی۔پی اور بی۔ایل۔اے کی نظریاتی مخالفت ہے۔ان کے گٹھ جوڑ کا مطلب صرف یہ ہے کہ ان کا سرمایہ کار وہی ہے جو انہیں دو زاویوں سے استعمال کر رہا ہے۔وزیر داخلہ کے مطابق نصر اللہ ٹی۔ٹی۔پی کی کوڑ کمیٹی کا رکن اور اس کے دفاعی کمیشن کا حصہ بھی تھا۔لانگاؤ نے بلوچستان کے نوجوانوں اور خواتین پر زور دیا کہ وہ دہشت گردوں کے مقاصد کو تسلیم کریں۔اور کہا کہ پاکستان ان کا اپنا ملک ہے اور ان سے سکیورٹی فورسز اور حکومت کے ساتھ کھڑے ہونے کا مطالبہ کیا۔

Back to top button